News ٰآس پاسٰ برصغیر تازہ ترین

سیاسی پارٹیوں کوحد بندی کمیشن سےملاقات کیلئے دعوت نامےجاری

جموں و کشمیر میں سات نئے اسمبلی حلقوں کے قیام سے متعلق حد بندی کمیشن کا وفد 6 تا 9 جولائی یونین ٹیریٹری کا دورہ کر رہا ہے جس دوران وہ یہاں کی بڑی سیاسی جماعتوں کے لیڈران کے علاوہ متعلقہ افسران سے ملاقات کرے گا۔
جموں و کشمیر کے چیف الیکٹورل دفتر کی جانب سے جموں و کشمیر کی بڑی سیاسی جماعتوں بشمول نیشنل کانفرنس، پی ڈی پی اور پردیش کانگریس کمیٹی کو دعوت نامے بھیجے جا چکے ہیں۔
جوائنٹ چیف الیکٹورل آفیسر انل کمار سلگوترہ نے ای ٹی وی بھارت کو فون پر بتایا کہ الیکشن کمیشن میں جو سیاسی جماعتیں درج ہو چکی ہیں ان کو حدبندی کمیشن سے ملاقات کے لئے دعوت نامے بھیجے گئے ہیں۔
انہوں کہا کہ جو چھوٹی سیاسی جماعتیں اور عوامی نمائندے ہیں وہ الیکٹورل دفتر میں حد بندی کمیشن سے ملنے کے لیے درخواست جمع کرا سکتے ہیں۔یاد رہے کہ حد بندی کمیشن 7 جولائی کو جنوبی کشمیر کے پہلگام ڈاک بنگلو میں، ضلع پلوامہ، شوپیان، اننت ناگ اور کولگام کے ضلع ترقیاتی کمشنرز جو متعلقہ ڈسٹرکت الیکشن افسر بھی ہیں، کے ساتھ میٹنگ کریں گے۔اسی روز وہ بڈگام، سرینگر، بارہمولہ، کپوارہ اور گاندربل کے ڈسٹرکٹ الیکشن افسران سے سرینگر میں ایک نجی ہوٹل میں میٹنگ کریں گے۔مزید پڑھیں: حدبندی کمیشن پر وادی میں خدشات کیوں ہیں؟جموں صوبے کے کشتواڑ، ڈوڈہ، رام بن کے افسران سے 8 جولائی کو جبکہ جموں، سانبہ، کٹھوعہ، ریاسی، راجوری اور پونچھ کے ساتھ جموں میں ایک نجی ہوٹل میں ملاقات کریں گے۔متعلقہ ضلع ڈسٹرکٹ الیکشن افسران کو کہا گیا ہے کہ وہ حد بندی کے لئے ضروری مواد اور دستاویزات اس میٹنگ میں دستیاب رکھیں۔واضح رہے کہ سیاسی جماعتیں بالخصوص نیشنل کانفرنس، کانگرس، پیپلز کانفرنس اور اپنی پارٹی نے کمیشن سے ملاقات کے لئے رضامندی ظاہر کی ہے جبکہ پی ڈی پی نے ابھی تک کمیشن سے ملنے پر خاموشی اختیار کی ہے، تاہم پارٹی ذرائع کا کہنا ہے کہ امکان ہے کہ ان کے لیڈران بھی کمیشن سے ملاقات کریں گے۔گرچہ سنہ 2002 میں فاروق عبد اللہ کی حکومت نے حد بندی پر سنہ 2026 تک پابندی عائد کر دی تھی۔ تاہم تنظیم نو قانون کے اطلاق کے بعد مرکزی سرکار نے جموں و کشمیر میں نئے اسمبلی حلقوں کے قیام کے لیے حد بندی کمیشن تشکیل دے کر یونین ٹریٹری میں مزید سات سیٹوں کا اضافہ کرنے کا حکم جاری کیا ہے۔سابق ریاست جموں و کشمیر میں اسمبلی حلقوں کی تعداد 111 تھی جن میں 87 پر ہی انتخابات منعقد ہوتے تھے کیونکہ 24 سیٹوں کو اس پار والے کشمیر کی آبادی کے لیے مخصوص رکھا جاتا ہے۔جموں و کشمیر (بشمول لداخ) میں سنہ 1994 میں آخری حد بندی ہوئی تھی جس میں اسمبلی حلقوں کی تعداد 76 سے 87 کر دی گئی تھی۔ جموں خطے میں پانچ سیٹوں کا اضافہ ہوا جس سے اس صوبے میں حلقوں کی تعداد 32 سے 37 ہوئی، جبکہ وادی میں چار سیٹوں کے اضافے سے سیٹوں کی تعداد 42 سے 46 ہوئی۔نئی حد بندی میں سات مزید سیٹوں کے قیام کا منصوبہ ہے جس سے یو ٹی جموں و کشمیر میں سیٹوں کی کل تعداد 90 تک پہنچ جائے.

1,953 total views, 0 views today

143 Replies to “سیاسی پارٹیوں کوحد بندی کمیشن سےملاقات کیلئے دعوت نامےجاری

  1. I keep listening to the news talk about receiving free online grant applications so I have been looking around for the most excellent site to get one. Could you tell me please, where could i acquire some?

Leave a Reply

Your email address will not be published.