News ٰآس پاسٰ برصغیر تازہ ترین

ایران چابہار بندرگاہ ڈیڑھ سال تک انڈیاکولیزپردےگا

ایران نے چابہار بندرگاہ کے ایک حصے کا آپریشنل کنٹرول انڈیا کے سپرد کرنے کے لیے ایک معاہدہ پر دستخط کیے ہیں۔
ایران کے صدر حسن روحانی نے سنیچر کو دلی میں انڈیا کے وزیر اعظم نریندر مودی سے مذاکرات کے بعد کہا کہ دونوں ملکوں کے تعلقات مزید گہرے ہوئے ہیں اور یہ کہ وہ علاقے سے دہشتگردی کا مسئلہ ختم کرنے کے لیے مل کر کام کرنے کے لیے تیار ہیں لیکن دہشتگردی کو کسی مذہب سے منصوب نہیں کیا جانا چاہیے۔
دلی سے نامہ نگار سہیل حلیم کے مطابق ایران اور انڈیا نے نو معاہدوں کو حتمی شکل دی ہے جن میں سب سے اہم معاہدہ چابہار بندرگاہ کے بارے میں ہے جو انڈیا کی مدد سے تعمیر کیا جارہا ہے اور یہ پاکستان کی گوادر بندرگاہ سے صرف 90 کلومیٹر دور ہے۔
اس معاہدے کے تحت انڈیا کو 18 مہینوں کے لیے بندرگاہ کے پہلے فیز کا آپریشنل کنٹرول حاصل ہو جائے گا۔
چابہار بندرگاہ میں انڈیا کی خاص دلچسپی ہے کیونکہ اس راستے سے وہ پاکستان کو بائی پاس کرتے ہوئے براہ راست افغانستان پہنچ سکتا ہے۔ انڈیا افغانستان اور ایران نے گذشتہ برس اس سلسلے میں ایک سہ فریقی معاہدے پر دستخط کیے تھے اور انڈیا نے افغانستان کو گندم سپلائی کرنے کے لیے اس راستے کا استعمال کرنا شروع کر دیا ہے۔
ایران کے صدر حسن روحانی نے چا بہار بندرگاہ ڈیولپمنٹ پراجیکٹ کے پہلے فيز کا افتتاح کیا
انڈیا سے افغانستان جانے کا آسان اور چھوٹا راستہ تو پاکستان سے گزرتا ہے لیکن فی الحال دونوں ملکوں کے تعلقات کی نوعیت کچھ ایسی ہے کہ اس راستے سے رسائی ممکن نہیں ہے۔
صدر روحانی کے دورے سے چند ہفتے قبل ہی اسرائیل کے وزیر اعظم بنیامن نیتن یاہو انڈیا کے دورے پر آئے تھے۔ انڈیا اور اسرائیل بھی ایک دوسرے کے قریب آ رہے ہیں اور انڈیا کے لیے دونوں ملکوں سے روابط میں توازن رکھنا ایک چیلنج ہے۔
صدر روحانی نے یہ بھی کہا کہ ایران اپنے جوہری پروگرام پر مغربی دنیا کے ساتھ ہونے والے معاہدے کی پاسداری کرے گا۔ امریکی صدر ڈانلڈ ٹرمپ اس معاہدہ کو مسنوخ کرنا چاہتے ہیں اور اگر وہ ایسا کرتے ہیں اور ایران پر نئی پابندیاں عائد کی جاتی ہیں تو انڈیا کے لیے بھی نئی مشکلات پیدا ہو سکتی ہیں۔
حسن روحانی انڈیا کے تین روزہ دورے پر آئے ہوئے تھے جس کا آغاز انھوں نے حیدرآباد سے کیا تھا۔ وہاں ایک خطاب میں انھوں نے کہا کہ مسلمانوں کو متحد ہو جانا چاہیے اور اگر ان میں اختلافات نہ ہوتے تو امریکہ یروشلم کو اسرائیل کی راجدھانی کے طور پر تسلیم کرنے کا فیصلہ نہ کرتا۔
مذاکرات کے بعد وزیر اعظم نریندر مودی نے ایک مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ انڈیا چابہار کو ریل کے ذریعے زاہدان سے جوڑنے میں ایران کی مدد کرے گا۔
ایران انڈیا کو تیل سپلائی کرنے والا تیسرا سب سے بڑا ملک ہے۔ اگرچہ دونوں ملکوں نے توانائی کے شعبے میں تعاون بڑھانے کی ضرورت پر زور دیا لیکن ابھی یہ واضح نہیں ہے کہ تیل اور گیس فیلڈز کے بارے میں کوئی پیش رفت ہوئی یا نہیں۔
انڈیا جنوبی ایران کے اُن آئل فیلڈز سے تیل اور گیس نکالنے کے لیے کانٹریکٹ حاصل کرنا چاہتا ہے جن کی ممکنہ مالیت اربوں ڈالر ہوگی لیکن برسوں سے جاری مذاکرات میں کوئی ٹھوس پیش رفت نہیں ہو سکی ہے۔
خیال رہے کہ انڈیا ایران اور افغانستان نے مئی 2016 میں یہ بین الاقوامی راہ داری قائم کرنے کا فیصلہ کیا تھا اور اس کے بعد سے ہی چابہار بندرگاہ پر کام تیزی سے آگے بڑھایا گیا۔
انڈیا نے گذشتہ سال چابہار کے راستے امداد کی شکل میں گندم کی ایک قسط افغانستان بھیجی تھی۔ اس نے افغانستان کو 11 لاکھ ٹن گندم امداد کی شکل میں دینے کا وعدہ کیا ہے اور یہ بالکل فری ہے۔
واضح رہے کہ ایرانی صدر حسن روحانی جمعرات کو انڈیا پہنچے تھے

2,449 total views, 0 views today

5 Replies to “ایران چابہار بندرگاہ ڈیڑھ سال تک انڈیاکولیزپردےگا

  1. Virtually all of whatever you assert happens to be supprisingly appropriate and it makes me ponder why I had not looked at this with this light before. Your piece really did turn the light on for me as far as this particular issue goes. Nevertheless there is one position I am not really too cozy with so while I try to reconcile that with the core idea of your point, allow me see exactly what the rest of the subscribers have to point out.Very well done.

  2. Useful info. Fortunate me I found your web site unintentionally, and I’m surprised why this twist of fate did not
    came about in advance! I bookmarked it.

Leave a Reply

Your email address will not be published.