News ٰآس پاسٰ بین الاقومی تازہ ترین عالم اسلام

بنگلہ دیش کےعام انتخابات میں اسلام پسند کیوں مقبول ہورہے ہیں؟

بنگلہ دیش کے عام انتخابات میں وزیراعظم حسینہ واجد کی جماعت عوامی لیگ اور اپوزیشن کی سب سے بڑی جماعت نیشنسلٹ پارٹی دونوں مذہبی جماعتوں پر تکیہ کرتی نظر آتی ہیں۔

مبصرین کے مطابق آئندہ حکومت کے قیام میں مذہبی جماعتوں کا کردار فیصلہ کن ہو گا۔ سوال یہ ہے کہ مذہبی جماعتیں کیوں اتنی اہم ہو گئی ہیں؟
مارچ 2005ء میں ایک اسلام پسند مذہبی رہنما فضل الحق امینی نے کہا تھا کہ بنگلہ دیش میں کوئی جماعت مدرسوں کے تعاون کے بغیر اقتدار میں نہیں آ سکتی۔ بنگلہ دیش بھر میں ہزاروں مذہبی مدرسے قائم ہیں، جن میں پڑھنے والے طلبہ کی تعداد ڈیڑھ ملین کے قریب بنتی ہے۔ ان مدرسوں میں سے زیادہ تر دیوبندی مکتبہء فکر سے تعلق رکھتے ہیں، جو اسلام پسند تشریحات کا حامل کہلاتا ہے۔

بنگلہ دیش میں عام انتخابات کا انعقاد 30 دسمبر کو ہو رہا ہے، جس میں گرینڈ الائنس اور جاتیو اوئیکو فرنٹ تاہم ان دونوں انتخابی اتحاد مسلمانوں پر بہت زیادہ تکیہ کرتے نظر آتے ہیں۔ اس سے لگتا یوں ہے کہ امینی کی کئی برس قبل کی گئی پیش گوئی درست ہوتی نظر آتی ہے۔

بنگلہ دیش میں اسلام کی ترویج سن 1975 تا 1990 کے درمیان فوجی آمریت کے دور میں دیکھی گئی، جہاں فوجی جرنیل، جن کے پاس حکومت کا قانونی جواز نہیں تھا، وہ مذہب کا استعمال کر کے طاقت کو دوام بخشتے رہے۔ بنگلہ دیش میں جہاں فوجی آمریتوں پر یہ ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ مذہب کو سیاست میں کھینچ لائے، وہیں سیاسی جماعتوں نے ان مذہبی گروہوں کو قبول بھی کیا۔

سن 1980ء سے عوامی لیگ اور بنگلہ دیش نیشنلسٹ پارٹی مذہب کو اپنی انتخابی فتوحات کے لیے استعمال کرتی آئی ہیں اور ان کا موقف یہ رہا ہے کہ یہ گروہ بڑی عوامی حمایت کے حامل ہیں۔ تاہم دستیاب اعداد و شمار اس موقف سے میل نہیں کھاتے۔

سن 1979ء میں بنگلہ دیش کے عام انتخابات میں فقط دو مذہبی جماعتوں نے حصہ لیا۔ جب کہ سن 1991ء میں یہ تعداد 17 ہو چکی تھی۔ اس کے بعد سن 1996 میں ایک اور مذہبی جماعت نے سیاست کے میدان میں اترنے کا اعلان کیا۔ تاہم سن 2001ء تک یہ تعداد گھٹ کر 11 رہ گئی اور سن 2008ء میں یہ تعداد صرف 10 تھی۔ سن 1991ء میں مذہبی جماعتوں کو پڑنے والے ووٹوں کی شرح 14 فیصد تھی، جو 2008ء میں صرف چھ فیصد رہی۔
بنگلہ دیش میں سب سے پرانی مذہبی پارٹی جماعت اسلامی پر بنگلہ دیشی الیکشن کمیشن انتخابات میں شرکت پر پابندی عائد کر چکا ہے۔ اس جماعت کے متعدد اہم اور اعلیٰ رہنما سن 1971ء میں پاکستان کے خلاف بنگلہ دیش کی مکتی کے تحریک میں ملزم قرار دیے جا چکے ہیں۔ تاہم دوسری جانب حفاظتِ اسلامی کے نام سے ایک اور مذہبی تنظیم میدان میں اتر چکی ہے، جو قدامت پسند سیاسی ایجنڈے کا نعرہ لگا رہی ہے۔ اس وقت بنگلہ دیش میں قریب 70 فعال مذہبی جماعتیں ہیں، جن میں سے 10 الیکشن کمیشن میں رجسٹرڈ ہیں۔

یہ بات اہم ہے کہ اپوزیشن کی سب سے بڑی جماعت نیشنلسٹ پارٹی کی رہنما خالدہ ضیا کرپشن کے مقدمات میں جیل میں ہیں، جب کہ ان کی جماعت نے متعدد جماعتوں کے ساتھ مل کر ایک بڑا انتخابی اتحاد قائم کیا ہے

2,189 total views, 0 views today

5 Replies to “بنگلہ دیش کےعام انتخابات میں اسلام پسند کیوں مقبول ہورہے ہیں؟

  1. I like the valuable info you provide in your articles. I will bookmark your weblog and check again here frequently. I am quite sure I will learn plenty of new stuff right here! Good luck for the next!

  2. Hello there I am so delighted I found your web site, I really found you by mistake, while I was browsing on Digg for something else, Nonetheless I am here now and would just like to say kudos for a marvelous post and a all round exciting blog (I also love the theme/design), I don’t have time to look over it all at the minute but I have bookmarked it and also added in your RSS feeds, so when I have time I will be back to read a great deal more, Please do keep up the excellent job.

  3. This design is incredible! You certainly know how to keep a
    reader entertained. Between your wit and your videos, I was almost moved
    to start my own blog (well, almost…HaHa!) Great job. I really enjoyed what you
    had to say, and more than that, how you presented it.
    Too cool!

  4. Thanks for one’s marvelous posting! I certainly enjoyed reading it, you happen to be a great author.I will remember to bookmark your blog and may
    come back down the road. I want to encourage you to ultimately
    continue your great writing, have a nice day!

Leave a Reply

Your email address will not be published.