Uncategorized

این آئی اے کےسامنے2 افراد کےاعترافی بیانات قلمبندایک سلطانی گواہ دوسراجیل کی اور

مانیٹرنگ ڈیسک = نئی دہلی = منی لانڈرنگ کیس کی تحقیقات میںایک پیش رفت کے تحت اس بات کا دعویٰ کیا گیا ہے کہ این آئی اے کے سامنے2ملزمان نے اپنے جرم کا اعتراف کرلیا ہے ، جن میں سے ایک کو سلطانی گواہ بننے کے بعد رہا کیا گیا جبکہ ایک کو جیل بھیج دیا گیا ہے۔ اس دوران گرفتار فوٹو جرنلسٹ کامران یوسف اور جاوید احمد نامی نوجوان کو 17اکتو بر تک جوڈیشل ریمانڈ میں بھیج دیا گیا ہے۔ادھرجموں سے سرحدی ضلع کپوارہ سے تعلق رکھنے والے2افراد کی گرفتاری عمل میں لائی گئی ہے ۔ ایک خبر رساں ادارے نے این آئی اے کے ایک افسر کا حوالہ دیتے ہوئے اپنی ایک رپورٹ میں بتایا ہے کہ منی لانڈرنگ کیس میں 2ملزمان نے اپنے اعترافی بیانات قلمبند کر وائے ہیں ۔رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ دونوں ملزمان کے بیانات جوڈیشل مجسٹریٹ کے سامنے ریکارڈ کرائے گئے جن کی عکس بندی بھی کرائی گئی، اور جس وقت جوڈیشل مجسٹریٹ کے سامنے دونوں ملزمان اپنا اعترافی بیانات قلمبند کرا رہے تھے اس وقت عدالت کے کمرے میں کوئی بھی این آئی اے کا افسر موجود نہیں تھا۔ملزمان نے اس بات کا اعتراف کیا کہ مزاحمتی لیڈران وادی کشمیر میں بد امنی پھیلانے کیلئے شر پسند عنا صر کو فنڈ نگ کرتے ہیں ۔مذکورہ این آئی اے افسر کا کہنا ہے کہ ان دونوں ملزمان میں ایک کو رسمی طوررہا کیا گیا جبکہ ایک کو حراست میںرکھا گیا ہے۔مذکورہ افسر نے دعویٰ کیا کہ ایک ملزم کو اس بات پر رہا کردیا گیا ،کیو نکہ اس نے سلطانی گواہ بننے پر رضامندی ظاہر کی ہے ۔تاہم این آئی اے نے دونوں ملزمان کے ناموں کو ظاہر کرنے سے اعتراض کیا ۔میڈیا رپورٹ کے مطابق رواں برس 24جولائی کو ایک شخص کے گھر پر چھاپہ مارا گیااور اُسکی گرفتار عمل میں لائی گئی ۔ ملزم نے این آئی اے کو منی لانڈرنگ کیس کے سلسلے میں تمام جانکاری دی ،کہ کس طرح پاکستان سے پیسہ آتا ہے ،کن کھاتوں میں چلا جاتا ہے اور کیسے ِاس پیسے کو کشمیر میں بد امنی پھیلانے کیلئے استعمال کیا جاتا ہے ۔ اعترافی بیانات قلم بند کر وانے میں ایک حریت لیڈر سید علی گیلانی کے قریبی ساتھیوں میں شمار ہوتا ہے ۔یاد رہے کہ این آئی اے نے اب تک10افراد کو منی لانڈرنگ کیس میں گرفتار کیا ہے جن میں 7مزاحمتی لیڈران بھی شامل ہیں۔اس کے علاوہ فوٹو جرنلسٹ کامران یوسف اور ایک نوجوان جاوید احمد کو بھی حراست میں لیا گیا ہے۔گرفتار شد گان میں حریت(گ) ترجمان ایاز اکبر ،پیر سیف اللہ ،ترجمان حریت (ع)شاہد الاسلام ،معراج الدین کلوال ،نعیم احمد خان ،فاروق احمد دار عرف بٹہ کراٹے شامل ہیں ۔اس دوران دہلی کی ایک عدالت نے گرفتار فوٹو جرنلسٹ کامران یوسف اور ایک نوجوان جاوید احمد کو17اکتوبر تک جوڈیشل ریمانڈ میں بھیج دیا ۔معلوم ہوا ہے کہ دونوں گرفتار نوجوانوں کو دہلی کی ایک عدالت میں کیس شنوائی کیلئے پیش کیا گیا ،جہاں ڈسٹرکٹ جج پونم بموا نے اِن کی جوڈیشل ریمانڈ میں توسیع کا فیصلہ صادر کیا ۔انہوں نے اپنے فیصلہ میںبتایا کہ دونوں نوجوانوں کو17اکتو بر تک جوڈیشل ریمانڈ میں رکھا جائے ۔جموں میں این آئی اے نے کارروائی عمل میں لاتے ہوئے 2کشمیریوں ظہور احمد اور نذیر احمد ،جن کا تعلق سرحدی ضلع کپوارہ سے ہے ، کو گرفتار کیا ہے ۔ دونوں گرفتار شدگان پر الزام ہے کہ وہ لشکر طیبہ کے جنگجوئوں کو تعائون فراہم کر رہے تھے

915 total views, 0 views today

One Reply to “این آئی اے کےسامنے2 افراد کےاعترافی بیانات قلمبندایک سلطانی گواہ دوسراجیل کی اور

  1. I do trust all the ideas you’ve introduced to your post.
    They’re really convincing and will certainly work.

    Still, the posts are too short for starters. May you
    please extend them a little from subsequent time? Thanks for the post.

Leave a Reply

Your email address will not be published.